ISLAMIC VIDEOS TUBE: ہم دے چلے جہاں میں توحید کی گواہی ہم آخرت کے راہی ہم دے چلے جہاں میں توحید کی گواہی ہم آخرت کے راہی - ISLAMIC VIDEOS TUBE
Latest News
Saturday, February 21, 2015

ہم دے چلے جہاں میں توحید کی گواہی ہم آخرت کے راہی

ہم دے چلے جہاں میں توحید کی گواہی ہم آخرت کے راہی

حق نواز فقط نام کا ہی حقنواز نہیں تھا ۔۔۔ بلکہ حق تعالی جل شانہ نے واقعی حق نواز کو جرات، غیرت، شجاعت، دلیری اور ان گنت اعلی اوصاف سے نوازا تھا، قدرت کے اعلی اوصاف سے نوازا ہوا حق نواز جیا تو حق کی خاطر اور دنیا سے چلا تو حق کی خاطر، حق نواز ان شخصیات میں تھا جو صرف حق کی بات کہتے نہیں بلکہ حق کہہ کر سب سے اول خود اس پر ضرورت پڑنے پر نثار بھی ہو جاتے ہیں ۔۔۔۔ دیکھنے میں حق نواز کمزور سا تھا پر حقیقتا بہت پر اعتماد با ہمت مرد حر تھا۔
علامہ حقنواز صحابہ و اہلبیت کی عظیم المرتبت محبت سے سرشار تھا، ان کا نوکر، خادم اور مستانہ تھا، اس بنا پر حقنواز پر بہت ظلم ڈھائے گئے جو وہ ہنس کر سہہ جاتا تھا، یہ کمزور سا انسان چٹانوں سے مضبوط حوصلے، ہمت اور پہاڑوں سے بلند عزم رکھتا تھا اور صحابہ کرام کی محبت میں طوفانوں کے رخ پھیر دیے، یہ صحابہ کرام کا جیالا، صحابہ کرام کا عاشق موجوں سے بھی اس انداز میں کھیلا کہ موجیں بھی اس کے جذبات دیکھ کر حیراں و پریشاں رہ گئے، یہ نوجوان صحرا میں چلا تو صحرا بھی گلزار بن گئے اور خزاؤں میں بھی بہار چھا گئی۔
شاعراسلام طاہر جھنگوی نے کیا خوب کہا ہے:
ظلم سہتا رہا دکھ اٹھاتا رہا
آندھیوں میں بھی وہ جگمگاتا رہا
علامہ حق نواز جھنگوی شہید کی دینی خدمات اور مسلم امہ پہ کیے احسانوں کو الفاظ میں سمیٹا تو نہیں جاسکتا پر، ہر وہ لمحہ جس لمحے علامہ حق نواز شہید کا ذکر آتا ہے تو سلام عقیدت پیش کیے بنا دل نہیں رہتا۔
ہم نااہل نا سمجھ تو ان کے احسانات سمجھ ہی نہ سکے، ہم فقط دنیا کی خاطر جیتے اور مرتے ہیں ۔۔۔۔ سوچا جائے تو پتہ لگتا ہے کہ حق نواز جی کر اور جان دے کر ہم پہ وہ احسان کرگیا ہے کہ ہم یہ احسان مرتے دم تک شاید نہ اتار سکے، یہ حق نواز ہی تو تھا جس نے کفر کی سازشوں کو بے نقاب کیا، وہ ہلچل مچائی کہ کفر خود تھرتھرا اٹھا، اس کمزور اور تنہا مرد کی ہمت پہ حیران رہ گیا اور حقنواز کو چپ کرانے کی ہر ممکن کوشش کرنے لگے پر یہ حق کا سفیر حق نواز چپ ہونے کے لئے یا بکنے کے لئے نہیں اٹھا تھا بلکہ یہ تو مسلمانوں میں دین کے دوست اور دین کے دشمن کی پہچان کے لئے سر پہ کفن باندھ کے اٹھا تھا اور اپنے مقصد میں کامیاب ہوگیا، اپنے لہو سے چراغ جلا کر گلی گلی، گھر گھر روشن کر گیا، اور ایسا نہ ختم ہونے والا قافلہ کارواں چلا گیا جو دشمنوں کی لاکھ کوششوں کے باوجود بھی ختم نہ ہوا، نہ جھکا نہ ہی بکا، اس قافلے پر طرح طرح کے الزامات لگائے گئے، کبھی دہشتگردم کبھی انتہا نپسند، کبھی فرقہ واریت پھیلانے والا تو کبھی جذباتی کہا گیا، پر یہ قافلہ چلتا رہا کٹتا رہا اور بڑھتا رہا، نہ کم ہوا نہ ختم ہوا بلکہ دن بہ دن اس میں اضافہ ہی ہوا، اور کیوں نہ ہوتا جھنگوی کے قطرے قطرے سے پر عزم ، بااعتماد سنی صحابہ کا غلام جو پیدا ہوا۔
جھنگوی تیرے لہو سے روشن ہے جہاں
نہ بکنے ولا نہ جھکنے والا قافلہ ہے رواں
آج بھی امیر عزیمت تیری صدا ہے گونجتی
کون ہے جو بنے صحابہ کا نایاب سچا پاسباں
جھنگوی کے مشن کو یا جھنگوی کی جرات، دلیری اور مردانگی کو لفظوں کی مالا میں کیا سمیٹوں؟ وہ خود ایک ایسی موتیوں کی چمکتی مالا ہے جس کے دم سے آج بھی کئی سینے ایمان کے نور سے منور ہوتے ہیں ۔۔۔ گلاب کا ایسا مہکتا ہوا پھول ہے کہ خوشبو اسکے الفاظ اس کے انداز اس کے کردار کی محسوس ہوجائے تو دل ایسا کھچا چلا جاتا ہے اور اس کی بات پہ فدا ہونے کو تڑبا جاتا ہے۔
اللہ پاک ہم گنہگاروں کو بھی امیرعزیمت کی راہ پر چلنے کی توفیق عطا فرمائے اور دشمنان اسلام سے کنارہ کشی کی توفیق عطا فرمائے اور اسلام کی سربلندی کے لئے ہم نااہلوں سے بھی کچھ کام لے۔ آمین
  • Blogger Comments
  • Facebook Comments

0 comments:

Post a Comment

Item Reviewed: ہم دے چلے جہاں میں توحید کی گواہی ہم آخرت کے راہی Rating: 5 Reviewed By: Pakistan Media Today