مسجد حرام میں رسول اللہﷺ کا داخلہ اور بتوں سے تطہیر​ - ISLAMIC VIDEOS TUBE مسجد حرام میں رسول اللہﷺ کا داخلہ اور بتوں سے تطہیر​ - ISLAMIC VIDEOS TUBE
Latest News
Friday, June 9, 2017

مسجد حرام میں رسول اللہﷺ کا داخلہ اور بتوں سے تطہیر​

17 رمضان المبارک یومِ فتحِ مکہ!
مسجد حرام میں رسول اللہﷺ کا داخلہ اور بتوں سے تطہیر​
رسول اللہﷺ اُٹھے اور آگے پیچھے اور گردو پیش موجود انصار و مہاجرین کے جلو میں مسجد حرام کے اندر تشریف لائے۔ آگے بڑھ کر حجرِ اسود کو چُوما اور اس کے بعد بیت اللہ کا طواف کیا۔ اس وقت آپﷺ کے ہاتھ میں ایک کمان تھی اور بیت اللہ کے گرد اور اس کے چھت پر تین سو ساٹھ بُت تھے۔ آپﷺ اسی کمان سے ان بتوں کو ٹھوکر مارتے جاتے تھے اور کہتے جاتے تھے:
جَآءَ ٱلْحَقُّ وَزَهَقَ ٱلْبَاطِلُ ۚ إِنَّ ٱلْبَاطِلَ كَانَ زَهُوقًا
(سورة الإسراء / بني إسرآءيل : 17 ، آیت : 81)
حق آگیا اور باطل چلا گیا، باطل جانے والی چیز ہے
جَآءَ ٱلْحَقُّ وَمَا يُبْدِئُ ٱلْبَٰطِلُ وَمَا يُعِيدُ
(سورة سبا : 34 ، آیت : 49)
حق آ گیا اور باطل کی چلت پھرت ختم ہو گئی۔
اور آپﷺ کی ٹھوکر سے بُت چہروں کے بل گرتے جاتے تھے۔
آپﷺ نے طواف اپنی اونٹنی پر بیٹھ کر فرمایا تھا اور حالتِ احرام میں نہ ہونے کی وجہ سے صرف طواف ہی پر اکتفا کیا۔ تکمیلِ طواف کے بعد حضرت عثمان رضی اللہ عنہ بن طلحہ کو بلا کر ان سے کعبہ کی کنجی لی۔ پھر آپﷺ کے حکم سے خانہ کعبہ کھولا گیا۔ اندر داخل ہوئے تو تصویریں نظر آئیں جن میں حضرت ابراہیم اور حضرت اسماعیل علیہما السلام کی تصویریں بھی تھیں اور ان کے ہاتھ میں فال گیری کے تیر تھے۔ آپﷺ نے یہ منظر دیکھ کر فرمایا "اللہ ان مشرکین کو ہلاک کرے۔ خدا کی قسم ان دونوں پیغمبروں نے کبھی بھی فال کے تیر استعمال نہیں کئے"۔ آپﷺ نے خانہ کعبہ کے اندر لکڑی کی بنی ہوئی ایک کبوتری بھی دیکھی۔ اسے اپنے دست مبارک سے توڑ دیا اور تصویریں آپﷺ کے حکم سے مٹا دی گئی۔

منقول

  • Blogger Comments
  • Facebook Comments

0 comments:

Post a Comment

Item Reviewed: مسجد حرام میں رسول اللہﷺ کا داخلہ اور بتوں سے تطہیر​ Rating: 5 Reviewed By: Pakistan Media Today